اساتذہ کے تئیں حکومت بہار کا رویہ ظالمانہ:مرغوب صدری علیگ

اساتذہ کے تئیں حکومت بہار کا رویہ ظالمانہ:مرغوب صدری علیگ

 

 

سمستی پور ( پریس ریلیز) بہار کے تقریباً ساڑھے تین لاکھ کنٹریکٹ اساتذہ 17 فروری سے یکساں کام کے بدلے یکساں تنخواہ کی مطالبات کی حمایت میں غیر معینہ مدت کیلئے ہڑتال میں ہیں لیکن اسی دوران ہندوستان میں کورونا جیسی مہلک وبا کے پھیلنے سے روکنے کیلئے لاک ڈاؤن کی تدابیر اختیار کیا گیا جس کے سبب اسکولوں کو بند ہو جانے کی وجہ سے ہڑتال بے معنی ہو کر رہ گئی جس سے بہار کے اساتذہ معاشی بحران کا شکار ہو گئے ہیں اساتذہ کی تنخواہ کم ہونے کی وجہ سے فاقہ کشی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ان خیالات کا اظہار سر سید لائبریری کے ڈائریکٹر مرغوب صدری علیگ نے کیا انہوں نے کہا کہ اس مشکل حالات میں حکومت بہار اور وزیر تعلیم اساتذہ یونین کے مطالبات کو تسلیم کرنے کے بجائے کورونا مرض کے نام پر سیاست کر ان کے جائز مطالبات کو تسلیم کرنے سے انکار کر رہی ہے وزیر تعلیم کا یہ رویہ ظالمانہ ہے انہوں نے کہا کہ بہار میں جب بھی قدرتی آفات کا سامنا کرنا پڑا ہے ایسے وقت میں اساتذہ حکومت کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر سماجی خدمات انجام دیتے رہے ہیں مسٹر صدری نے کہا کہ اس دوران بہار میں بیالیس اساتذہ مالی مشکلات اور دیگر وجوہات کی بنا پر لقمہ اجل کا شکار ہو چکے ہیں پھر بھی حکومت کا رویہ اساتذہ مخالف ہے جو افسوسناک ہے مسٹر صدری نے کہا کہ جب تک حکومت بہار ان جائز مطالبات کے حق میں فیصلہ نہیں لیتی ہے ہڑتال جاری رہے گا

اپنے مضامین اور خبر بھیجیں


 udannewsdesk@gmail.com
 7462884092

ہمیں فیس بک پیج پر بھی فالو کریں


  https://www.facebook.com/udannewsurdu/

loading...
udannewsdesk@gmail.comآپ بھی اپنے مضامین ہمیں اس میل آئی ڈی پر بھیج سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *