بڑے بھائی کا ہونا کسی نعمت سے کم نہیں

بڑے بھائی کا ہونا کسی نعمت سے کم نہیں

زندگی میں بہت سی ایسی چیزیں ہیں جن پر بات نہیں کی جاتی ہیں، اور اس پر غور بھی نہیں کیا جاتا انہیں میں سے رشتہ داریاں بھی ہیں جو عام طور پر موضوع بحث نہیں آتیں، یقینا رشتہ و تعلق خدا کی ایک عظیم نعمت ہے، ماں باپ، بھائی بہن، اور دوسرے أعزہ واقارب کا ہونا کسی رحمت خداوندی سے کم نہیں، کہا جاتا ہے جن کو اپنے میسر ہوں ان کو دنیا کی تمام خوشیاں میسر ہوتی ہیں، انہیں اپنوں میں سے ایک بڑے بھائی کا ہونا ہے ماں باپ کے بعد سب سے زیادہ آپ کی کیئر اور خیال کرنے والا بڑا بھائی ہی ہوتا ہے،معاشرے میں عام طور پر یہی دیکھا جاتا ہے کہ جب چھوٹے بھائی کو کوئی پریشانی لاحق ہوتی ہے یا کوئی چیز مطلوب ہوتی ہے تو سب سے پہلے اپنے بڑے بھائی سے ذکر کرتا ہے،بھائی چھوٹوں کے لیے مثل والد ہوتا ہے ان کی خوشیوں میں شریک ہوتا ہے، اور پریشانیوں میں خود پریشان ہوجاتا ہے، وہ اپنے چھوٹوں کو والدین کی طرح شفقت و محبت سے پروان چڑھاتا ہے، ان کی نیند اورکھانےپینے کا خیال رکھتا ہے، ان کے بیمار ہونے پر ماں کی طرح خود بھی راتوں کو جاگتا ہے، ان کا خیال رکھتا ہے ان کے اچھے مستقبل اور خوبصورت زندگی کے لیے ہمہ وقت فکر مند اور دعاگو رہتا ہے. بھائی باہمی مدد و تعاون کا وہ ستون ہوتا ہے جس کی نظیر کسی دوسرے رشتے اور تعلق میں نہیں ملتی، بھائی ہی اس فطرت اور جبلت کا حامل ہے جو نصرت و تعاون سے عبارت ہوتی ہے، اس کی پیدائش ہی اپنے بھائیوں کی مدد کے وصف کے ساتھ ہوتی ہے، اس کے علاوہ معاشرے میں بھی بھائی کو محافظ اور معاون کے طور پر دیکھا اور سمجھا جاتا ہے۔
چنانچہ عربی زبان میں ایک کہاوت مشہور ہے کہ
” کثرت الاخوان تدل علی کثرۃ الأعوان”
یعنی بھائیوں کی کثرت مددگاروں کی کثرت پر دلالت کرتی ہے، بھائی ہونا ایک ایسا وصف اور خوبی ہے جو ہر اعتبار سے باہمی تعاون و مدد اور خیر خواہی سے عبارت ہوتا ہے، یہ ایسا وصف ہے جو زمان و مکان کی قید سے آزاد ہوتا ہے، زندگی کے ہر موڑ پر بھائی غم خوار و غمگسار ہوتا ہے، اگر وہ ان تمام صفات سے خالی ہے تو رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے متعین کردہ اخوت کے معیار کے مطابق وہ بھائی نہیں ہے بلکہ صرف اور صرف شریکِ وراثت اور جائیداد ہے۔
ناچیز اللہ سے دعا گو ہے کہ ہر کسی کے بھائیوں میں وہ تمام اوصاف اور خوبیاں پیدا فرما دے جن کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اخوت کا معیار قرار دیا ہے…..

از قلم ✍🏻. اعجاز احمد ندوی چمپارنی

اپنے مضامین اور خبر بھیجیں


 udannewsdesk@gmail.com
 7462884092

ہمیں فیس بک پیج پر بھی فالو کریں


  https://www.facebook.com/udannewsurdu/

loading...
udannewsdesk@gmail.comآپ بھی اپنے مضامین ہمیں اس میل آئی ڈی پر بھیج سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *