کیسے عطا کریں زندگی کو زندگی؟

کــــیسـے عــــطـا کــــریــں زنــــــدگـی کـــو زنــــــدگـی؟

محمدی روبینہ عندلیب ابو الکلام

مالیگاؤں (ناسک)

 

 

بــــــســـم اللہ الــرحـمـن الـرحـیـم

 

*الــــــحـمــدللہ الـــــذی کـــــفی وســــــلام عـــــلی عـــبـــادہ الــــذیـن اصــــــطـفی امـــابعــــد*

 

*قـــــال تــــعالـیٰ فـــلــنـحیـینـہ حــــیاۃ طـــیبـۃ ولـــنـجـــزیــنـھــــم اجـــــــرھـم بـــاحــــسن مــا کـانـوا یـــعمـــلـون (نــحل٩٧)*

 

*قــــال رســــول اللہ صـــلـی اللہ عـلیـہ وســـــلـم: الــــدنـیـا ســــجـن الــــمــومــن وجــــنـۃ الــکـافــر (۔رواہ مـــسلـم)

 

زندگی کی چند سانسیں جو رب العالمین کی طرف سے بیش بہا اور قیمتی تحفہ ہیں اسے کسی نعمت سے کم نہ گردانیں۔ زندگی کی راہیں بے شمار ہیں، حیات مستعار کی تمنائیں لاتعداد ہیں مقاصد ان گنت ہیں ۔ زندگی کو کسی بھی ناحیے سے دوام نہیں یہ چند آنسووں ومسکراہٹوں پر مشتمل زندگی، تمناؤں وآرزوں کا خوشنما و مزین محل، حسرتوں کا ویرانہ، خواہشوں کا آشیانہ،ابتلاء و آزمائش کا مسکن ہے۔

اس دنیا میں ہر کوئی مختلف قسم کی پریشانیوں سے دوچار ہے، ہر آنکھ میں آنسو ہے،ہر ذہن میں آتش فشاں، ہر دل پر غموں کا پہاڑ، ہر ہسپتال بیماروں سے بھرا پڑا ہے، کتنے ہی مریض برسوں سے بستروں پر کروٹیں بدل رہے ہیں مگر انہیں شفا نہیں مل رہی ہے، کتنے بے گناہ مجرم بنے جیل کی سلاخوں کے پیچھے اپنی زندگی کے قیمتی لمحات گذارنے پر مجبور ہیں لیکن رہائی کی کوئی کرن نظر نہیں آرہی ہے، کتنی ہی مائیں اپنے بچوں کی راہیں تکتے تکتے اس دارفانی سے رخصت ہو جاتی ہیں مگر انتظار انتظار ہی رہ جاتا ہے. اصل میں یہی ہے اس دارفانی کی حقیقت__

 

فی الواقع یہ حیات مستعار حیات ابدی کی تیاری ہے ۔ عالم یہ ہے کہ ہر راہ مسافروں سے بھری پڑی ہے، ہر منزل کی طرف قافلے کے قافلے رواں دواں ہیں، ہر منزل کو حاصل کرنے والے متوالے سبک روی سے اپنی منزل مقصود کو حاصل کرنے کی سعی پیھم میں ڈوبے ہوئے ہیں، مسافر کے لئے سفر سے پہلے اپنی اصل منزل کا تعین کسی دفینہ شدہ لعل وگوہر سے کم نہیں ایسا نہ ہو کہ ہم اپنی منزل مقصود سے اور اللہ کے ذکر سےاعراض کر کے ان لوگوں کی فہارس میں اپنا نام درج کرالیں جن کے بارے میں رب العالمین نے خود گواہی دی ہے *ومـــن اعــــرض عـــن ذکــــری فـــان لــہ مــعیــشـۃ ضــنـکـا ونـــحـشـــرہ یــوم الـقـــیمـۃ اعـمـــی (سورہ طـہ ١٢٤)*

آہ ! اس سے زیادہ افسوس ناک مقام، دل کو خوں کر دینے والی سوچ، جگر کو پارہ پارہ کردینے والا منظر، خوف سے رونگٹے کھڑے ہوجانے والی حالت،اور کیا ہوگی کہ ایک مسافر سفر کی صعوبتیں برداشت کرکے ایک طویل مدت کے انتظار کے بعد بصد شوق اپنی پناہ گاہ میں پہنچتے ہی بے تحاشہ پکار اٹھے *یــــا لـیــــت بیــــنی وبـــینـک بـــــعد الـمــــشرقیـن( سورہ زخـرف38)*

 

*اسی روز وشب میں الجھ کر نہ رہ جا*

*کہ تیرے زماں اور مکاں اور بھی ہیں!!!!*

 

دنیا کی حقیقت حال سے آگاہ کرتے ہوئے رب رحیم وکریم کا فرمان ہے ومــــا الـحـــیاۃ الـــــدنـیا الا مـتـــــاع الـغـــــرور (سورہ عــمران ١٧٥)*

 

وقال *ومـــا الـــحیـــاۃ الـــدنـیا الا لـــــعـب ولـــــھـو◇ (سورہ انعــام ٣٢

 

اگــــرزندگی ایک دریا ہےتو آخرت اس کا ساحل ، تقویٰ اس کی کشتی، دنیا میں جتنی بھی مخلوقات ہیں سب اپنے اپنے حصے کی متعینہ مدت ضرور گذارتے ہیں ہاں البتہ ہر ایک کے اپنی زندگی کو خوشنما وبدنما بنانے کے ناحیے مختلف ہوتے ہیں کوئی ہنس کر گذارتا ہے تو کوئی روکر، کوئی خوشیاں بانٹ کر تو کوئی خوشیاں چھین کر، کوئی درد اٹھا کر تو کوئی درد دے کر، کوئی غم کے سمندر میں غوطہ زن ہوکر تو کوئی مسرتوں میں نہاکر، کوئی کمزور وبے سہارا کی مدد کرکے تو کوئی انہیں سے خدمت لے کر، کوئی یادیں چھوڑ کر تو کوئی اپنی تلخ یادیں لے کر، کوئی دوست کا بگاڑ کر تو کوئی دشمن کے کام آکر،اس دار فانی کو الوداع کہہ جاتے ہیں

اس لیے اگر ہمیں اپنی تاریک وبے نور زندگی کو منور زندگی عطا کرنا ہے تو مادیت کے بت کو توڑنا ہوگا دنیا پرستی کے صنم کدے میں آگ لگانی ہوگی یہ وہ راز ونیاز ہے جس کی طرف رہنمائی کرتے ہوئے خود خالق کائنات نے ارشا د فرمایا

*⚜️□یـــــایـھا الـــذیـن آمــــنوا ھــل ادلـکـــم علــی تـجـــارۃ تنـــجیـــکـم مــن عـــذاب الـیــــم□⚜️ (سورہ صــف١٠)*

کیا زندگی کو زندگی عطا کرنے کا اس سے بھی عظیم تراحساس کوئی ہوسکتا ہے کہ اپنے جسم وجاں کی توانائی کو اللہ کے دین کی سربلندی کے لئے وقف کر دیا جائے

اس سے بلند تر اور کونسی نعمت ہوسکتی ہے کہ زبان حال سے اعلان کر دیا جائے *⚜️♤قــــل ان صـــلاتـی ونســــکـی ومـــحیــای ومـــمـاتی للہ رب الـــعالــمین♤⚜️ (سورہ انعام ١٦٢)*

دنیا کی مادی زندگی کے صنم اور بتان خوں کے رنگ کو توڑ کر اعتراف عام کرلیں

*⚜️♧انــــی ذاھــب الـــی ربـــی سـیـــھدیـن♧⚜️ (سورہ صافات٩٩)* دنیاوی زندگی کے ہر سمت ورخ سے منہ موڑ کر دنیا والوں پر اس راز کو فاش کردیں *⚜️☆انــــی وجــھـت وجھــی لـلـــذی فــــطـر الســــماوات والارض☆⚜️ (سورہ انعام ٧٩)*

 

اپنے مضامین اور خبر بھیجیں


 udannewsdesk@gmail.com
 7462884092

ہمیں فیس بک پیج پر بھی فالو کریں


  https://www.facebook.com/udannewsurdu/

loading...
udannewsdesk@gmail.comآپ بھی اپنے مضامین ہمیں اس میل آئی ڈی پر بھیج سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *