غزل

______غزل______

*عالم فیضی*

 

خلوص و وفا جس میں باقی نہیں ہے

صداقت کبھی اس میں آتی نہیں ہے

 

دلوں کو ملانے کی کرتا جو کوشش

نظر میں کسی کے وہ پاپی نہیں ہے

 

مسیحا بنا پھرتا ہے قوم کا جو

وہ سچ بولنے کا ہی عادی نہیں ہے

 

جو چلتا نہیں ہے شریعت کی رہ پر

نگہ میں کسی کے وہ حاجی نہیں ہے

 

نبی کی جو سنت سے کرتا بغاوت

خدا کی نظر میں وہ ناجی نہیں ہے

 

کئے ہیں غبن قوم کا جو خزانہ

ہٹانا انہیں پد سے کافی نہیں ہے

 

خلائق پریشاں بہت اب ہیں عالم

  • وجہ ہے خدا ان سے راضی نہیں ہے

 

07/09/2020

اپنے مضامین اور خبر بھیجیں


 udannewsdesk@gmail.com
 7462884092

ہمیں فیس بک پیج پر بھی فالو کریں


  https://www.facebook.com/udannewsurdu/

loading...
udannewsdesk@gmail.comآپ بھی اپنے مضامین ہمیں اس میل آئی ڈی پر بھیج سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *