میانمار میں فوجی بغاوت کے خلاف احتجاج

سارونگ انقلاب: میانمار میں خواتین کا فوجی بغاوت کے خلاف احتجاج میں توہم پرستانہ عقیدہ

خواتین نے گلیوں میں اپنے سکرٹ ٹانگ دی

 

میانمار میں خواتین اپنے لباس سے متعلق مقامی ’توہم پرستی‘ کا استعمال فوجی بغاوت اور عسکری حکمرانی کے خلاف احتجاج کر کے کر رہی ہیں جسے میانمار میں ’سارونگ انقلاب‘ بھی کہا جا رہا ہے۔

 

میانمار میں بڑے پیمانے پر یہ مانا جاتا ہے کہ اگر مرد عورت کے ’سارونگ‘ یا سکرٹ کے نیچے سے گزر جاتا ہے تو وہ اپنی مردانہ طاقت کھو دیتا ہے۔

 

میانمار میں مردانہ طاقت کو ’ہاپون‘ کہا جاتا ہے۔ جنوب مشرقی ایشیا میں خواتین کے سارونگ (سکرٹ) پہننے کا رواج عام ہے۔

اپنے مضامین اور خبر بھیجیں


 udannewsdesk@gmail.com
 7462884092

ہمیں فیس بک پیج پر بھی فالو کریں


  https://www.facebook.com/udannewsurdu/

loading...
udannewsdesk@gmail.comآپ بھی اپنے مضامین ہمیں اس میل آئی ڈی پر بھیج سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *