محرم الحرام:مقام وپیغام

محرم الحرام: مقام وپیغام

 

از قلم انیس الرحمن تیمی چمپارنی

 

سبھی جانتے ہیں کہ دنیا میں جتنے بھی کیلنڈر ہیں تمام کے مہینوں کی تعداد بارہ ہی ہوا کرتی ہے فرق صرف اتنا ہوتا ہے کہ ان میں سالوں کی ابتداء الگ الگ مہینوں سے ہوتی ہے مثال کے طور پر ہندی کیلنڈر کا آغاز چیت کے مہینہ سے ہوتا ہے عیسوی تقویم جنوری سے شروع ہوتی ہے جبکہ اسلامی تقویم کی شروعات ماہ محترم محرم الحرام سے ہوتی ہےجو از روے شرع خصوصی فضائل کا حامل ہے امتیازی خصائص سے عبارت ہے افضل الصیام بعد رمضان کے شرف کا عین حقدار ہے افضل الأشھر شہر اللہ الذی تدعونہ المحرم کا حقیقی آئینہ دار ہے اور دین اسلام میں جس کو یہ اہمیت ومنزلت اور مقام و مرتبہ حاصل ہے کہ اس میں یوم عاشورہ کا روزہ رکھ لینے پر گزشتہ گناہوں کی معافی و تلافی کی بشارت سنائی گئی ہے لیکن افسوس کہ آج کچھ ناعاقبت اندیش لوگ اس ماہ کے اس قدر افضل ہونے کے باوجود اس کی حرمت و عظمت ومرتبت کو نہیں سمجھ پاتے ہیں اور اس کے پیغامات کو فراموش کر کے امور بدعیہ میں غوطہ زن نظر آتے ہیں اس مہینے کے کیا اہم سندیش ہیں یہ جاننا ہر کلمہ گو مسلمان کے لئے از بس ضروری ہے چنانچہ چند اہم پیغام درج ذیل ہیں

(١)یہ مہینہ حرمت و عظمت کا ہے اس میں قتال وجدال منع اور فسق وفجور حرام ہے جیسا کہ سورہ توبہ کے اندر ارشاد ہے کہ کتاب اللہ میں اللہ کے نزدیک مہینوں کی تعداد بارہ ہے اور یہ اسی دن سے ہے جس دن آسمان و زمین کی تخلیق ہویی ان میں چار حرمت والے ہیں یہی دین قیم ہے چنانچہ ان میں قتال وجدال کر کے اپنے آپ پر ظلم مت کرو گویا اس کے اندر ظلم وجور سے روک کر در اصل یہ پیغام اور درس دیا جا رہاہے کہ اس کی توقیر و تعظیم کو بحال رکھا جائےفتنہ و فساد کی وادی میں قدم زن ہونے اور سفاکیت وبربریت کے سمندر میں غوطہ زنی سے کنارہ کشی اختیار کی جائے

(٢)یہ مہینہ واقعہ ہجرت نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی یاد دلاتا ہے جس کے اندر نصیحت و پیغام کے یہ انمول موتی چھپے ہوے ہیں کہ اگر اھل ایمان کے سامنے  ایسا وقت آن پڑے کہ ان کے لئے اپنا ایمان اور دین بچانا امر محال ہو جائےتو اس وقت کون سا راہ اختیار کرنا باعثِ نجات وکامرانی ہوگی ظاہر ہے انہیں وہی راہ اپنانے میں کامیابی وسرخروءی حاصل ہوگی جس کو ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنایا تھا یعنی ھجرت کرنا ھوگی کیونکہ ہمارے لیے اسوہ اور نمونہ آپ ہی ہیں لقد کان لکم فی رسول اللہ اسوۃ حسنۃ

(٣) یہ مہینہ چونکہ قمری سال کا پہلا مہینہ ہے اس اعتبار سے اس کا ایک اہم پیغام یہ ہے کہ اس کے آتے ہی محاسبہ نفس شروع کر دیا جائے اور گزشتہ سال کےاچھےبرےکاموں کا اندازہ کرکے از سرِ نو نیے عزم وحزم اور بلند حوصلہ و ولولہ کے ساتھ اپنی زندگی کے باقی ایام کو خوبصورت اور بہترین بنانے کی حتی الامکان کوشش کیا جاے ایسا نہ ہو کہ محاسبہ نفس نہ کرے اور گمراہیوں میں ڈوب کر اپنی آخرت کو برباد کر لیں امام ابنِ قیم رحمہ اللہ فرماتے ہیں (ھلاک القلب من اھمال محاسبتھا ای النفس ومن موافقتھا و اتباع ھواھا)

لہذا ہم تمام کی یہ ذمہ داری ہے کہ اس ماہ کی تقدس وعظمت کو سمجھے اور نیک اعمال کر کے عند اللہ اپنا ایک اچھا مقام ومرتبہ بناے اللہ ہمیں اس کی توفیق دے آمین

اپنے مضامین اور خبر بھیجیں


 udannewsdesk@gmail.com
 7462884092

ہمیں فیس بک پیج پر بھی فالو کریں


  https://www.facebook.com/udannewsurdu/

loading...
udannewsdesk@gmail.comآپ بھی اپنے مضامین ہمیں اس میل آئی ڈی پر بھیج سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *