قوم کا سچا ہمدرد

قوم کا سچا ہمدرد

عبدالعلیم برکت اللہ سراجی عمری

 

سر سید احمد خان دہلی میں پیدا ہوئے۔ کم عمری ہی میں علم کے دولت سے مالا مال ہو گئے تھے۔ بڑے ہوئے تو دیکھا کہ قوم بن چرواہے کے جانوروں کی طرح مارے پھر رہا تھا اور اس کا نوجوان ہاتھوں میں شراب لئے طوائف خانوں میں کسی رقاصہ کی زلفوں میں اپنے موت کا راستہ ڈھونڈ رہا تھا۔

وقت بہت مشکل، راستہ کانٹوں بھرا ، ایک طرف غیروں کی مار دوسری طرف اپنوں کی گالیاں ، جاہلوں نے پھٹے جوتوں سے استقبال کیا تو پڑھے لکھوں نے کفر کا فتوی تک دے دیا۔ جب لوگ پایلوں کے جھنکار میں مدہوش تھے تب یہ مسیحا اپنے پیروں میں گھنگھرو باندھ کر اپنے قوم کو بیدار کررہا تھا۔

شاہ جہاں نے اپنے ارجمند کو ممتاز محل اور اس کی یاد میں تاج محل بنایا لیکن سر سید نے اپنے قوم کو ہی تاج محل سمجھا اور ملت کے ہر بیٹے بیٹیوں کو شاہ جہاں اور ممتاز ۔ اور ان کی حفاظت کے لیے ایک لال قلعہ بنایا جسے دنیا آج علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے جانتی ہے۔ جس کی دیواریں آج مشکل وقت میں شیشہ پلائی ہوئی دیوار کے مانند کام کرتی ہیں (منقول)

 

1857کا غدر مسلمانوں پر انتہائی تباہ کن ثابت ہوا۔ اس غدر میں مسلمانوں کا کوئی پرسان حال نہیں تھا

ادھر انگریز اپنا دشمن سمجھتے تھے اور غیر مسلم ان کو غدار کہتی تھی۔ تو اس نازک موقعہ پر سر سید خان نے کچھ انگریزوں کو بچا کر ان کے دلوں میں جگہ بنالی۔

– اور 1859ء میں اسباب بغاوت ہند لکھ کر قوم کو الزامات سے بچا لئے پھر اسی سال مراد آباد میں فارسی مدرسہ قائم کیا، 1864ء مراد آباد میں یتیم خانہ کھولا، 1864ء ہی میں غازی پور میں سائنٹفک سوسائٹی قائم کی اور ایک فارسی مدرسہ قائم کیا جو آج وکٹوریہ ڈگری کالج سے مشہور ہے۔

– آپ 1866ء میں لندن کا سفر کئے اس کے واپسی کے بعد آپ نے تہذیب الاخلاق مجلہ جاری کیا۔ اور اپنے قوم کے ترقی کے لئے علی گڑھ میں1875ء میں مدرسۃ القران قائم کیا وہی 1877ء میں محمڈن اینگلو اوریئنٹل کالج بنا۔ محنتوں کو دیکھ کر 1878ء میں سر کا خطاب ملا۔ اسی کالج کو 1920ء میں یونیورسٹی کا درجہ مل گیا۔

اپنے مضامین اور خبر بھیجیں


 udannewsdesk@gmail.com
 7462884092

ہمیں فیس بک پیج پر بھی فالو کریں


  https://www.facebook.com/udannewsurdu/

loading...
udannewsdesk@gmail.comآپ بھی اپنے مضامین ہمیں اس میل آئی ڈی پر بھیج سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *