نظم

نظم

                ایک لڑکا کی فریاد

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

  اب کون پڑھے گا یار ارے رے بابا نہ بابا

  صرف ہوتا ہے وقت بیکار ارے رے بابا نہ بابا

        گھر میں میری جو عزت تھی

      ماں باپ کی ملی بھی شفقت تھی

     مجھ سے تھا گھر آباد میرا

      تھا سب کی زباں پر لاڈ میرا

    لیکن مکتب نے چھین لیا

    مجھ ہی سے میرا یہ پیار

  اب کون پڑھے گا یار ارے رے بابا نہ بابا

  صرف ہوتا ہے وقت بیکار ارے رے بابا نہ بابا

        معصوم بچے اور بچیوں کو دیکھوں

       کہتے جسے من کے سچے کو دیکھوں

        ملک کے جو ہیں روشن ستارے

      عادت ہے ان کے نیارے و پیارے

      لیکن اسکول سے رہتے ٹیچر ہی فرار

     آخر کیسے بڑھے یہ تعلیمی معیار

  اب کون پڑھے گا یار ارے رے بابا نہ بابا

  صرف ہوتا ہے وقت بیکار ارے رے بابا نہ بابا

     میں بھی جیسے تیسے دسویں پاس کیا

     اپنی عزت کو محلیں میں راس کیا

    کیسے ویسے کر کے میں آگیا کالج

    پاس نہ تھا میرے کچھ بھی نالج

   پھر بھی ایک حسینہ کر بیٹھی آنکھیں چار

  جس نے کتنوں کو کیا تھا پہلے ہی بیمار

  اب کون پڑھے گا یار ارے رے بابا نہ بابا

  صرف ہوتا ہے وقت بیکار ارے رے بابا نہ بابا

       پڑھ لکھ کرکے نوکری چاہا

      من ہی من میں چھوکری چاہا

      مکاں بھی بیچا دکاں بھی بیچی

      رشوت خاطر زمیں بھی بیچی

       لیکن مکاروں کی یہ بھر مار

       مجھے کرگیا جیتے جی سنگسار

  اب کون پڑھے گا یار ارے رے بابا نہ بابا

  صرف ہوتا ہے وقت بیکار ارے رے بابا نہ بابا

      اب ٹھانا خود کچھ کرنا ہے

     یو بھوک سے اب نہ مرنا ہے

     پاپر پکوڑے کا میرا ٹھیلا

     لگنے لگا اب لوگوں کا میلا

     کتنا سنہرا ہلچل ہے بھارت کا بازار جہاں پی جی کرتے ہیں کچری کا ویاپار

  اب کون پڑھے گا یار ارے رے بابا نہ بابا

  صرف ہوتا ہے وقت بیکار ارے رے بابا نہ بابا

       ذیشان ہلچل تیمی

      مانو کالج اورنگ آباد

اپنے مضامین اور خبر بھیجیں


 udannewsdesk@gmail.com
 7462884092

ہمیں فیس بک پیج پر بھی فالو کریں


  https://www.facebook.com/udannewsurdu/

loading...
udannewsdesk@gmail.comآپ بھی اپنے مضامین ہمیں اس میل آئی ڈی پر بھیج سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *